Aapko chehre se bhi bimar hona chahiye

آپ کو چہرے سے بھی بیمار ہونا چاہئے
عشق ہے تو عشق کا اظہار ہونا چاہئے
آپ دریا ہیں تو پھر اس وقت ہم خطرے میں ہیں
آپ کشتی ہیں تو ہم کو پار ہونا چاہئے
ایرے غیرے لوگ بھی پڑھنے لگے ہیں ان دنوں
آپ کو عورت نہیں اخبار ہونا چاہئے
زندگی تو کب تلک در در پھرائے گی ہمیں
ٹوٹا پھوٹا ہی سہی گھر بار ہونا چاہئے
اپنی یادوں سے کہو اک دن کی چھٹی دے مجھے
عشق کے حصے میں بھی اتوار ہونا چاہئے
aap ko chehre se bhi bimar hona chahiye
ishq hai to ishq ka izhaar hona chahiye

aap dariya hain to phir is waqt hum khatre mein hain
aap kashti hain to hum ko par hona chahiye

aire-ghaire log bhi padhne lage hain in dinon
aap ko aurat nahin akhbar hona chahiye

zindagi tu kab talak dar-dar phiraegi hamein
tuta-phuta hi sahi ghar-bar hona chahiye

apni yaadon se kaho ek din ki chhutti de mujhe
ishq ke hisse mein bhi itwar hona chahiye

اپنا تبصرہ بھیجیں