Budhy Baloch Ki Naseehat Bety Ko

نظم:بڈھے بلوچ کی نصیحت بیٹے کو
ہو تیرے بیاباں کی ہوا تجھ کو گوارا
اس دشت سے بہتر ہے نہ دلی نہ بخارا
جس سمت میں چاہے صفت سیل رواں چل
وادی یہ ہماری ہے، وہ صحرا بھی ہمارا
غیرت ہے بڑی چیز جہان تگ و دو میں
پہناتی ہے درویش کو تاج سر دارا
حاصل کسی کامل سے یہ پوشیدہ ہنر کر
کہتے ہیں کہ شیشے کو بنا سکتے ہیں خارا
افراد کے ہاتھوں میں ہے اقوام کی تقدیر
ہر فرد ہے ملت کے مقدر کا ستارا
محروم رہا دولت دریا سے وہ غواص
کرتا نہیں جو صحبت ساحل سے کنارا
دیں ہاتھ سے دے کر اگر آزاد ہو ملت
ہے ایسی تجارت میں مسلماں کا خسارا
دنیا کو ہے پھر معرکہء روح و بدن پیش
تہذیب نے پھر اپنے درندوں کو ابھارا
اللہ کو پامردی مومن پہ بھروسا
ابلیس کو یورپ کی مشینوں کا سہارا
تقدیر امم کیا ہے، کوئی کہہ نہیں سکتا
مومن کی فراست ہو تو کافی ہے اشارا
اخلاص عمل مانگ نیا گان کہن سے
شاہاں چہ عجب گر بنوازند گدا را
Nazam:Budhy Baloch Ki Naseehat Bety Ko
Ho Tere Bayaban Ki Hawa Tujh Ko Gawara
Iss Dasht Se Behter Hai Na Dilli Na Bukhara
 
Jis Simat Mein Chahe Sifat-e-Seel-e-Rawan Chal
Wadi Ye Humari Hai, Woh Sehra Bhi Humara
 
Ghairat Hai Bari Cheez Jahan-e-Tagg-o-Dou Mein
Pehnati Hai Darvesh Ko Taj-e-Sar-E-Dara
 
Hasil Kisi Kamil Se Ye Poshida Hunar Kar
Kehte Hain Ke Sheeshe Ko Bana Sakte Hain Khara
 
Afrad Ke Hathon Mein Hai Aqwam Ki Taqdeer
Har Fard Hai Millat Ke Muqaddar Ka Sitara
 
Mehroom Raha Doulat-e-Darya Se Woh Ghawwas
Karta Nahin Jo Souhbat-e-Sahil Se Kinara
 
Deen Hath Se De Kar Agar Azad Ho Millat
Hai Aesi Tajarat Mein Musalman Ka Khasara
 
Dunya Ko Hai Phir Ma’arka-e-Rooh-o-Badan Paish
Tehzeeb Ne Phir Apne Darindon Ko Ubhara
 
Allah Ko Pa-Mardi-e-Momin Pe Bharosa
Iblees Ko Yourap Ki Machinon Ka Sahara
 
Taqdeer-e-Umam Kya Hai, Koi Keh Nahin Sakta
Momin Ki Firasat Ho To Kafi Hai Ishara
 
Ikhlas-e-Amal Mang Nayagan-e-Kuhan Se
Shahan Che Ajab Gar Banawazand Gada Ra
 

اپنا تبصرہ بھیجیں