Andaz Hu-Ba-Hu Teri Aawaz-E-Pa Ka Tha

غزل
انداز ہو بہو تری آواز پا کا تھا
دیکھا نکل کے گھر سے تو جھونکا ہوا کا تھا
 
اس حسن اتفاق پہ لٹ کر بھی شاد ہوں
تیری رضا جو تھی وہ تقاضا وفا کا تھا
 
دل راکھ ہو چکا تو چمک اور بڑھ گئی
یہ تیری یاد تھی کہ عمل کیمیا کا تھا
 
اس رشتۂ لطیف کے اسرار کیا کھلیں
تو سامنے تھا اور تصور خدا کا تھا
 
چھپ چھپ کے روؤں اور سر انجمن ہنسوں
مجھ کو یہ مشورہ مرے درد آشنا کا تھا
 
اٹھا عجب تضاد سے انسان کا خمیر
عادی فنا کا تھا تو پجاری بقا کا تھا
 
ٹوٹا تو کتنے آئنہ خانوں پہ زد پڑی
اٹکا ہوا گلے میں جو پتھر صدا کا تھا
 
حیران ہوں کہ وار سے کیسے بچا ندیمؔ
وہ شخص تو غریب و غیور انتہا کا تھا
Ghazal
Andaz Hu-Ba-Hu Teri Aawaz-E-Pa Ka Tha
Dekha nikal ke ghar se to jhonka hawa ka tha
 
Is husn-e-ittifaq pe lut kar bhi shad hun
Teri raza jo thi wo taqaza wafa ka tha
 
Dil rakh ho chuka to chamak aur badh gai
Ye teri yaad thi ki amal kimiya ka tha
 
Is rishta-e-latif ke asrar kya khulen
Tu samne tha aur tasawwur khuda ka tha
 
Chhup chhup ke roun aur sar-e-anjuman hansun
Mujh ko ye mashwara mere dard-ashna ka tha
 
Uttha ajab tazad se insan ka khamir
Aadi fana ka tha to pujari baqa ka tha
 
Tuta to kitne aaina-khanon pe zad padi
Atka hua gale mein jo patthar sada ka tha
 
Hairan hun ki war se kaise bacha ‘nadim’
Wo shakhs to gharib o ghayur intiha ka tha
 

اپنا تبصرہ بھیجیں