Ranj Firaaq E Yaar Main Ruswa Nahi Howa

Ghazal
Ranj Firaaq-E-Yaar Main Ruswa Nahi Hua
Itna main chup hua keh tamasha nahi hua

Aisa saffar hai jis main koi humsaffar nahi
Rasta hai es tarah ka keh dekha nahi hua

Mushkil hua hai hamain rehna es diyar main
Barsoo yahaan rahe hain yeh apna nahi hua

Wo kaam shah-e-sheher se ya sheher se ho
Jo kaam bhi hua yahaan acha nahi hua

Milna tha aik bar usay phir kahin munir
Aisa main chahta tha per aisa nahi hua
غزل
رنج فراقِ یار میں رسوا نہیں ہوا
اتنا میں چُپ ہوا کہ تماشہ نہیں ہوا

ایسا سفر ہے جس میں کوئی ہمسفر نہیں
راستہ ہے اس طرح کا کہ دیکھا نہیں ہوا

مشکل ہوا ہے ہمیں رہنا اس دیار میں
برسوں یہاں رہے ہیں ، یہ اپنا نہیں ہوا

وہ کام شاہِ شہر سے یا شہر سے ہوا
جو کام بھی ہوا یہاں اچھا نہیں ہوا

ملنا تھا ایک بار اُسے پھر کہیں منیر
ایسا میں چاہتا تھا پر ایسا نہیں ہوا

اپنا تبصرہ بھیجیں