Gham Hai Ya Khushi Hai Tu

غزل
غم ہے یا خوشی ہے تو
میری زندگی ہے تو

آفتوں کے دور میں
چین کی گھڑی ہے تو

میری رات کا چراغ
میری نیند بھی ہے تو

میں خزاں کی شام ہوں
رت بہار کی ہے تو

دوستوں کے درمیاں
وجہ دوستی ہے تو

میری ساری عمر میں
ایک ہی کمی ہے تو

میں تو وہ نہیں رہا
ہاں مگر وہی ہے تو

ناصرؔ اس دیار میں
کتنا اجنبی ہے تو
Ghazal
Gham Hai Ya Khushi Hai Tu
Meri zindagi hai tu

Aafaton ke daur mein
Chain ki ghadi hai tu

Meri raat ka charagh
Meri neend bhi hai tu

Main khizan ki sham hun
Rut bahaar ki hai tu

Doston ke darmiyan
Wajh-e-dosti hai tu

Meri sari umar mein
Ek hi kami hai tu

Main to wo nahi raha
Han magar wahi hai tu

‘Nasir’ is dayar mein
Kitna ajnabi hai tu

اپنا تبصرہ بھیجیں