Meri Khawaish Keh Mein Phir Se Frishta Ho Jaon

Meri Khawaish Keh Mein Phir Se Frishta Ho Jaon

Meri Khawaish Keh Mein Phir Se Frishta Ho Jaon
Maa se es traha lipat jaon keh bacha ho jaon

Kam se bachon ke honton ki hansi ki khatir
Aisi matti mein milana keh khelona ho jaon

 

Sochta hoon tou chalak uthti hain meri aankhin
Tere baray mein na sochon tou akela ho jaon

 

Chara gar teri maharat pe yaqeen hai lekin
Kia zarori hai keh har bar mein acha ho jaon

 

Be-sabab ishq mein marna mujhe manzoor nahi
Shama tou chah rahi hai pitnga ho jaon

 

Shayari kuch bhi ho roswa nahi honay deti
Mein siyasat mein chala jaon tou nanga ho jaon

 

Meri khawaish keh mein phir se frishta ho jaon
Sochta hoon tou chalak uthti hain meri aankhin
غزل
میری خواہش کہ میں پھر سے فرشتہ ہو جاؤں
ماں سے اس طرح لپٹ جاؤں کہ بچہ ہو جاؤں

کم سے بچوں کے ہونٹوں کی ہنسی کی خاطر
ایسی مٹی میں ملانا کہ کھلونا ہو جاؤں

سوچتا ہوں تو چھلک اٹھتی ہیں میری آنکھیں
تیرے بارے میں نہ سوچوں تو اکیلا ہو جاؤں

چارہ گر تیری مہارت پہ یقیں ہے لیکن
کیا ضروری ہے کہ ہر بار میں اچھا ہو جاؤں

بے سبب عشق میں مرنا مجھے منظور نہیں
شمع تو چاہ رہی ہے کہ پتنگا ہو جاؤں

شاعری کچھ بھی ہو رسوا نہیں ہونے دیتی
میں سیاست میں چلا جاؤں تو ننگا ہو جاؤں

میری خواہش کہ میں پھر سے فرشتہ ہو جاؤں
ماں سے اس طرح لپٹ جاؤں کہ بچہ ہو جاؤں

اپنا تبصرہ بھیجیں