Main Nay Jo Kuch Bhi Socha Howa Hai

غزل
میں نے جو کچھ بھی سوچا ہوا ہے، میں وہ وقت آنے پے کر جاؤں گا
تم مجھے زہر لگتے ہو اور ، میں کسی دن پی کے مر جاؤں گا

تُو تو بینائی ہے میری تیرے علاوہ ، مجھے کچھ بھی دیکھتا نہیں
میں نے تجھ کو اگر تیرے گھر پہ اُتارہ ، تو میں کیسے گھر جاؤں گا

میں خلا ہوں خلاؤں کا نعم البدل خود خلا ہے، تمہیں کیا پتہ
میں تمہاری طرح کوئی خالی جگہ تو نہیں ہوں ، کہ بھر جاؤں گا

چاہتا ہوں تمیہں اور بہت چاہتا ہوں ، تمہیں خود بھی معلوم ہے
ہا ں اگر مجھ سے پوچھا کسی نے ، تو میں سیدھا منہ پہ مکر جاؤں گا

تیرے دل سے ، تیرے شہر سے ، تیرے گھر سے تیری آنکھ سے
تیرے در سے ، تیری گلیوں سے تیرے وطن سے نکالا ہوا ہوں کدھر جاؤں گا
Ghazal
Main Nay Jo Kuch Bhi Socha Howa Hai , Main Wo Waqt Aanay Py Kar Jaunga
Tum mujhy zehar lagtay ho aur , main kisi din pi ky mar jaunga

To tu banai hai meri teray elawa, mujhy kuch bhi dekhta nahi
Main nay tujh ko agar teray ghar py utara , tu main kaisy ghar jaunga

Main khala hun khalaon ka nem-al-badal khud khala hai , tumhain kiya pata
Main tumhare tarha koi khali jagha to nahi hun , keh bhar jaunga

Chahta hun tumhain aur bahut chahta hun , tumhain khud bhi pata hai
Haan agar mujh say pucha kisi nay , tu main sidha moh py mokar jaunga

Teray dil say , teray sheher say , teray ghar say , teri aankhon say
Teray der say , teri galion say , teray watan say nikala howa hun kidhar jaunga

اپنا تبصرہ بھیجیں