Nahin Mera Aanchal Mela Hai

نظم
نہیں میرا آنچل میلا ہے
اور تیری دستار کے سارے پیچ ابھی تک تیکھے ہیں

کسی ہوا نے ان کو اب تک چھونے کی جرأت نہیں کی ہے
تیری اجلی پیشانی پر

گئے دنوں کی کوئی گھڑی
پچھتاوا بن کے نہیں پھوٹی

اور میرے ماتھے کی سیاہی
تجھ سے آنکھ ملا کر بات نہیں کر سکتی

اچھے لڑکے
مجھے نہ ایسے دیکھ
اپنے سارے جگنو سارے پھول
سنبھال کے رکھ لے

پھٹے ہوئے آنچل سے پھول گر جاتے ہیں
اور جگنو
پہلا موقع پاتے ہی اڑ جاتے ہیں
چاہے اوڑھنی سے باہر کی دھوپ کتنی ہی کڑی ہو

Nazam
Nahin Mera Aanchal Mela Hai
Aur teri dastar ke sare pech abhi tak tikhe hain

Kisi hawa ne in ko ab tak chhune ki jurat nahin ki hai
Teri ujli peshani par

Gae dinon ki koi ghadi
Pachhtawa ban ke nahin phuti

Aur mere mathe ki siyahi
Tujh se aankh mila kar baat nahin kar sakti

Achchhe ladke
Mujhe na aise dekh
Apne sare jugnu sare phul
Sambhaal ke rakh le

Phate hue aanchal se phul gir jate hain
Aur jugnu
Pahla mauqa pate hi ud jate hain
Chahe odhni se bahar ki dhup kitni hi kadi ho

اپنا تبصرہ بھیجیں