Baaz Auqaat Khayalon Mein Bhatak Jata Hoon

Baaz Auqaat Khayalon Mein Bhatak Jata Hoon

Baaz Auqaat Khayalon Mein Bhatak Jata Hoon
Itna chalta hoon keh bethay hoye thak jata hoon

Aik chehra hai jisay dekh ke lamhe bhar ko
Dil thaher jata hai mein aap dharak jata hoon

Teen konon se nikaltay hain ghutan, khauf, sukoot
Mein sarakta howa chothay mein dabak jata hoon

Gham ki hiddat ne pakayi hai kuch aisay meri khaak
Jab bhi deewar se takraon khanak jata hoon

Ghar se mein khainch ke lata hoon sarak tak khud ko
Phir jidhar le ke chali jaye sarak, jata hoon

Bhagta hoon keh massamon se nikal jaye numi
Warna kuch roz mein aakhon se chalak jata hoon

Kitna aasan hai tanhai ko duhra karna
Sirf kamray mein lagay aainay tak jata hoon

Baaz auqaat khayalon mein bhatak jata hoon
Itna chalta hoon keh bethay hoye thak jata hoon
غزل
بعض اوقات، خیالوں میں بھٹک جاتا ہوں
اِتنا چلتا ہوں کہ بیٹھے ہوئے تھک جاتا ہوں

ایک چہرہ ہے جسے دیکھ کے لمحہ بھر کو
دل ٹھہر جاتا ہے ، میں آپ دھڑک جاتا ہوں

تین کونوں سے نکلتے ہیں گھٹن، خوف، سکوت
میں سرکتا ہوا چوتھے میں دبک جاتا ہوں

غم کی حدت نے پکائی ہے کچھ ایسے مری خاک
جب بھی دیوار سے ٹکراؤں، کھنک جاتا ہوں

گھر سے میں کھینچ کے لاتا ہوں سڑک تک خود کو
پھر جدھر لے کے چلی جائے سڑک، جاتا ہوں

بھاگتا ہوں کہ مساموں سےنکل جائے نمی
ورنہ کچھ روز میں آنکھوں سے چھلک جاتا ہوں

کتنا آسان ہے تنہائی کو دہرا کرنا
صرف کمرے میں لگے آئینے تک جاتا ہوں

بعض اوقات، خیالوں میں بھٹک جاتا ہوں
اِتنا چلتا ہوں کہ بیٹھے ہوئے تھک جاتا ہوں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں