Wo Sahilon Pe Gane Wale Kya Hue

غزل
وہ ساحلوں پہ گانے والے کیا ہوئے
وہ کشتیاں چلانے والے کیا ہوئے
 
وہ صبح آتے آتے رہ گئی کہاں
جو قافلے تھے آنے والے کیا ہوئے
 
میں ان کی راہ دیکھتا ہوں رات بھر
وہ روشنی دکھانے والے کیا ہوئے
 
یہ کون لوگ ہیں مرے ادھر ادھر
وہ دوستی نبھانے والے کیا ہوئے
 
وہ دل میں کھبنے والی آنکھیں کیا ہوئیں
وہ ہونٹ مسکرانے والے کیا ہوئے
 
عمارتیں تو جل کے راکھ ہو گئیں
عمارتیں بنانے والے کیا ہوئے
 
اکیلے گھر سے پوچھتی ہے بے کسی
ترا دیا جلانے والے کیا ہوئے
 
یہ آپ ہم تو بوجھ ہیں زمین کا
زمیں کا بوجھ اٹھانے والے کیا ہوئے
Ghazal
Wo Sahilon Pe Gane Wale Kya Hue
Wo kashtiyan chalane wale kya hue

Wo subah aate aate reh gayi kahan
Jo qafile the aane wale kya hue

Main un ki rah dekhta hun raat bhar
Wo roshni dikhane wale kya hue

Ye kaun log hain mere idhar udhar
Wo dosti nibhane wale kya hue

Wo dil mein khubne wali aankhen kya huin
Wo honT muskurane wale kya hue

Imaraten to jal ke rakh ho gain
Imaraten banane wale kya hue

Akele ghar se puchhti hai be-kasi
Tera diya jalane wale kya hue

Ye aap hum to bojh hain zamin ka
Zamin ka bojh uthane wale kya hue

اپنا تبصرہ بھیجیں