Aye Umer-E-Rawan Ahista Chal

Aye Umer-E-Rawan Ahista Chal

Aye Umer-E-Rawan Ahista Chal
Kuch khowab hain jin ko lekhna hai

Tabeer ki soorat dani hai
Kuch log hain ujray dil walay

Jinhain apni mohabbat dani hai
Kuch phool hain jin ko chunna hai

Aur haar ki soorat dani hai
Kuch apni neend bhi baqi hai

Jaise bantna hai kuch logon mein
Un ko bhi rahat dani hai

Aye umer-e-rawan ahista chal
Abhi khasa qarz chukana hai

Aye umer-e-rawan ahista chal
Kuch khawab hai jin ko lekhna hai
غزل
اے عمر رواں آہستہ چل
کچھ خواب ہیں جن کو لکھنا ہے

تعبیر کی صورت دینی ہے
کچھ لوگ ہیں اُجڑے دل والے

جنہیں اپنی محبت دینی ہے
کچھ پھول ہیں جن کو چننا ہے

اور ہار کی صورت دینی ہے
کچھ اپنی نیند بھی باقی ہے

جیسے بانٹنا ہے کچھ لوگوں میں
اُن کو بھی راحت دینی ہے

اے عمر رواں آہستہ چل
ابھی خاصہ قرض چکانا ہے

اے عمر رواں آہستہ چل
کچھ خواب ہیں جن کو لکھنا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں