Rabta Lakh Sahi Qafila-Salar Ke Sath

غزل
رابطہ لاکھ سہی قافلہ سالار کے ساتھ
ہم کو چلنا ہے مگر وقت کی رفتار کے ساتھ

غم لگے رہتے ہیں ہر آن خوشی کے پیچھے
دشمنی دھوپ کی ہے سایۂ دیوار کے ساتھ

کس طرح اپنی محبت کی میں تکمیل کروں
غم ہستی بھی تو شامل ہے غم یار کے ساتھ

لفظ چنتا ہوں تو مفہوم بدل جاتا ہے
اک نہ اک خوف بھی ہے جرأت اظہار کے ساتھ

دشمنی مجھ سے کئے جا مگر اپنا بن کر
جان لے لے مری صیاد مگر پیار کے ساتھ

دو گھڑی آؤ مل آئیں کسی غالبؔ سے قتیلؔ
حضرت ذوقؔ تو وابستہ ہیں دربار کے ساتھ
Ghazal
Rabta Lakh Sahi Qafila-Salar Ke Sath
Hum ko chalna hai magar waqt ki raftar ke sath
 
Gham lage rahte hain har aan khushi ke pichhe
Dushmani dhup ki hai saya-e-diwar ke sath
 
Kis tarah apni mohabbat ki main takmil karun
Gham-e-hasti bhi to shamil hai gham-e-yar ke sath
 
Lafz chunta hun to mafhum badal jata hai
Ek na ek khauf bhi hai jurat-e-izhaar ke sath
 
Dushmani mujh se kiye ja magar apna ban kar
Jaan le le meri sayyaad magar pyar ke sath
 
Do ghadi aao mil aaen kisi ‘ghaalib‘ se ‘qatil’
Hazrat ‘zauq’ to wabasta hain darbar ke sath

اپنا تبصرہ بھیجیں