Aise Iss Hath Se Gare Hum Log| Ghazal Poetry

Aise Iss Hath Se Gare Hum Log| Ghazal Poetry

Aise Iss Hath Se Gare Hum Log
Tootte tootte bache hum log

Apna qissa suna raha hai koi
Aur deewar ke bane hum log

Wasal ke bhaid kholti mitti
Chadaren jhaarte hoye hum log

Iss kabootar ne apni marzi ki
Seetiyan marte rahe hum log

Pochne par koi nahi bola
Kaise darwazay kholte hum log

Hafize ke liye dawa khayi
Aur bhi bhoolne lage hum log

Aain mumkin tha lout aata woh
Iss ke peeche nahi gaye hum log

Aise iss hath se gare hum log
Tootte tootte bache hum log
غزل
ایسے اس ہاتھ سے گرے ہم لوگ
ٹوٹتے ٹوٹتے بچے ہم لوگ

اپنا قصہ سنا رہا ہے کوئی
اور دیوار کے بنے ہم لوگ

وصل کے بھید کھولتی مٹی
چادریں جھاڑتے ہوئے ہم لوگ

اس کبوتر نے اپنی مرضی کی
سیٹیاں مارتے رہے ہم لوگ

پوچھنے پر کوئی نہیں بولا
کیسے دروازہ کھولتے ہم لوگ

حافظے کے لیے دوا کھائی
اور بھی بھولنے لگے ہم لوگ

عین ممکن تھا لوٹ آتا وہ
اس کے پیچھے نہیں گئے ہم لوگ

ایسے اس ہاتھ سے گرے ہم لوگ
ٹوٹتے ٹوٹتے بچے ہم لوگ

اپنا تبصرہ بھیجیں