Tum Akeli Nahi Ho Saheli Jisae Veeran Ghar Ko

Tum Akeli Nahi Ho Saheli Jisae Veeran Ghar Ko

Nazam
Tum Akeli Nahi Ho Saheli Jise Veeran Ghar Ko Sajaana Tha
Aur aik shayar ke lafzon ko such maan kar us ki poja mein din kaatne thay

Tum se pehle bhi aisa aik khawab jhooti tasali mein jaan de chuka hai
Tumhain bhi wo aik din kehay ga keh tum se pehle kisi ko zuban de chuka hai

Wo tou shayar hai aur saaf zahir hai
Shayar hawa ki hathali pe lekhi hoi wo paheli hai

Jis ne abad aur azal ke darichon ko uljha diya
Wo tou shayar hai shayar tamna ke sehra mein rim karnay wala hiran hai

Shobda-saaz subha ki pehli kiran hai
Adab-gha ulfat ka memar hai aur khud apne khawabo ka ghaddar hai

Wo tou shayar hai shayar ko bas fakar loh-o-qalam hai
Usay koi dukh hai na kisi ka ghum hai

Wo tou shayar hai shayar ko kia khoof marne se
Shayar tou khud sha-sawar ajal hai

Usay kis tarha taal sakta hai koi wo tou atal hai
Mein usay janti hun mein usay janti hun

Wo samandar ki wo laher hai
Jo kinaron se wapis palat’tay howay

Meri khuddari Ayreion pe lagi rait aur mujhe bhi bha le gaya
Wo mere junglon ke darkhton pe baithi hoi shehed ki makhiyan bhi uda le gaya

Us ne mere badan ko chua aur meri haddiyon se wo nazam Kashidi
Jin ko mein parh ke kanp uthti hun

Aur sochti hun yeh masla dil bari ka nahi
Khuda ki qassam kha ke kehti hun

Wo jo bhi kehta rahay wo kisi ka nahi
Saheli meri baat maano tum usay janti hi nahi ho

Wo khuda aisay paay se tan hai
Aur tum aik pathar se nakhun pe likhi hoi
Usi ki aik nazam ho tum akeli

Tum akeli nahi ho saheli jisae veeran ghar ko sajaana tha
Aur aik shayar ke lafzon ko such maan kar us ki poja mein din kaatne thay
نظم
تم اکیلی نہیں ہو سہیلی جسے اپنے ویران گھر کو سجانا تھا
اور ایک شاعر کے لفظوں کوسچ مان کر اُس کی پوجا میں دن کاٹنے تھے

تم سے پہلے بھی ایسا ایک خواب جھوٹی تسلی میں جان دے چکا ہے
تمہیں بھی وہ ایک دن کہے گا کہ تم سے پہلے کسی کو زباں دے چکا ہے

وہ تو شاعر ہے اور صاف ظاہر ہے
شاعر ہوا کی ہتھیلی پہ لکھی ہوئی وہ پہیلی ہے

جس نے ابد اور ازل کے درِچوں کو اُلجھا دیا ہے
وہ تو شاعر ہے شاعر تمنا کے صحرا میں رم کرنے والا ہِرن ہے

شوبدا ساز صبح کی پہلی کِرن ہے
ادب گاہ اُلفت کا معمار ہے اور خود اپنے خوابوں کا غدار ہے

وہ تو شاعر ہے شاعر کو بس فقرِ لوح و قلم ہے
اُسے کوئی دکھ ہے نہ کسی کا غم ہے

وہ تو شاعر ہے شاعرکو کیا خوف مرنے سے
شاعر تو خود شاہسوار اجل ہے

اُسے کس طرح ٹال سکتا ہے کوئی وہ تو اٹل ہے
میں اُسے جانتی ہوں میں اُسے جانتی ہوں

وہ سمندر کی وہ لہر ہے
جو کناروں سے واپس پلٹتے ہوئے

میری خورداری ایڑیوں پہ لگی ریت بھی اور مجھے بھی بہا لے گیا
وہ میرے جنگلوں کے درختوں پہ بیٹھی ہوئی شہد کی مکھیاں بھی اُڑا لے گیا

اُس نے میرے بدن کو چھو اور میری ہڈیوں سے وہ نظمِ کُشیدی
جن کو میں پڑھ کے کانپ اُٹھتی ہوں

اور سوچتی ہوں یہ مسئلہ دل بری کا نہیں
خدا کی قسم کھا کے کہتی ہوں

وہ جو بھی کہتا رہے وہ کسی کا نہیں
سہیلی میری بات مانوں تم اُسے جانتی ہی نہیں ہو

وہ خدا ایسے پائے سے تن ہے
اور تم ایک پتھر سے ناخن پہ لکھی ہوئی
اُسی کی ایک نظم ہو

تم اکیلی نہیں ہو سہیلی جسے اپنے ویران گھر کو سجانا تھا
اور ایک شاعر کے لفظوں کوسچ مان کر اُس کی پوجا میں دن کاٹنے تھے

اپنا تبصرہ بھیجیں