Naam Hoon Mein Pata Nahi Hoon Mein

Naam Hoon Mein Pata Nahi Hoon Mein

Naam Hoon Mein Pata Nahi Hoon Mein
Chal raha hoon mein khara nahi hoon mein

Jo howa so howa mohabbat mein
Laut kar dekhta nahi hun mein
 
Mujhe se bechara hai wo hoga
Us se bechra howa nahi hun mein
 
Yeh zamana nahi bhalai ka
Warna itna bura nahi hoon mein
 
Wo bari sadgi se milta hai
Jaise kuch janta nahi hoon mein
 
Be-niyazana zindagi kab tak
Admi hoon khuda nahi hoon mein
 
Dekhta hoon tatol kar khud ko
Waqai hoon bhi ya nahi hoon mein
 
Yahi anwar sho’our hoon ab tak
Dekh lo dusara nahi hoon mein
 
Naam hoon mein pta nahi hoon mein
Chal raha hoon mein khara nahi hoon mein
غزل
نام ہوں میں پتہ نہیں ہوں میں
چل رہا ہوں کھڑا نہیں ہوں میں
 
جو ہوا سو ہوا محبت میں
لوٹ کر دیکھتا نہیں ہوں میں
 
مجھ سے بچھڑا ہوا ہے وہ ہوگا
اُس سے بچھڑا ہوا نہیں ہوں میں
 
یہ زمانہ نہیں بھلائی کا
ورنہ اتنا برا نہیں ہوں میں
 
وہ بڑی سادگی سے ملتا ہے
جیسے کچھ جانتا نہیں ہوں میں
 
بے نیازانہ زندگی کب تک
آدمی ہوں خدا نہیں ہوں میں
 
دیکھتا ہوں ٹٹول کر خود کو
واقعی ہوں بھی یا نہیں ہوں میں
 
یہی انور شعوؔر ہوں اب تک
دیکھ لو دوسرا نہیں ہوں میں
 
نام ہوں میں پتہ نہیں ہوں میں
چل رہا ہوں کھڑا نہیں ہوں میں

اپنا تبصرہ بھیجیں