Bakhat Se Koi Shikayat Hai Nah Aflaak Se Hai

Bakhat Se Koi Shikayat Hai Nah Aflaak Se Hai

Bakhat Se Koi Shikayat Hai Nah Aflaak Se Hai
Yahi kia kam hai keh nisbat mujhe iss khak se hai

Khwab mein bhi tujhe bholun tou rawa rakh mujhe se
Woh royya jo hawa ka khas-o-khashaak se hai

Bazam anjum mein qaba khak ki pehni mein ne
Aur meri sari fazeelat usi poshak se hai

Itni roshan hai teri subah keh hota hai gumaan
Yeh ujala to kisi deeda namnaak se hai

Hath tu kat diye kozha garon ke hum ne
Mojzay ki wohi umeed magar chak se hai

Bakhat se koi shikayat hai nah aflaak se hai
Yahi kia kam hai keh nisbat mujhe iss khak se hai
غزل
بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے
یہی کیا کام ہے کہ نسبت مجھے اِس خاک سے ہے

خواب میں بھی تجھے بھولوں تو روا راکھ مجھ سے
وہ رویہ جو ہوا کا خس و خاشاک سے ہے

بزم انجم میں قبا خاک کی پہنی میں نے
اور مری ساری فضیلت اُسی پوشاک سے ہے

اِتنی روشن ہے تری صبح کہ ہوتا ہے گماں
یہ اُجالا تو کسی دیدہ نمناک سےہے

ہاتھ تو کاٹ دیے کوزہ گروں کے ہم نے
معجزے کی وہی اُمید مگر چاک سے ہے

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے
یہی کیا کام ہے کہ نسبت مجھے اِس خاک سے ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں