Dono Jahaan Teri Muhabbat Mein Haar Ke

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے
ویراں ہے مے کدہ خم و ساغر اداس ہیں
تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے
اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن
دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے
دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا
تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے
بھولے سے مسکرا تو دیے تھے وہ آج فیضؔ
مت پوچھ ولولے دل ناکردہ کار کے
 
donon jahan teri muhabbat mein haar ke
wo ja raha hai koi shab-e-gham guzar ke
 
viran hai mai-kada khum-o-saghar udas hain
tum kya gae ki ruth gae din bahaar ke
 
ek fursat-e-gunah mili wo bhi chaar din
dekhe hain hum ne hausle parwardigar ke
 
duniya ne teri yaad se begana kar diya
tujh se bhi dil-fareb hain gham rozgar ke
 
bhule se muskura to diye the wo aaj ‘faiz’
mat puchh walwale dil-e-na-karda-kar ke

اپنا تبصرہ بھیجیں