Dhund Raha Hai Farang Aish-E-Jahan Ka Dawam

نظم
ڈھونڈ رہا ہے فرنگ عیش جہاں کا دوام
وائے تمنائے خام وائے تمنائے خام
پیر حرم نے کہا سن کے میری رویداد
پختہ ہے تیری فغاں اب نہ اسے دل میں تھام
تھا ارنی گو کلیم میں ارنی گو نہیں
اس کو تقاضا روا مجھ پہ تقاضا حرام
گرچہ ہے افشائے راز اہل نظر کی فغاں
ہو نہیں سکتا کبھی شیوۂ رندانہ عام
حلقۂ صوفی میں ذکر بے نم و بے سوز و ساز
میں بھی رہا تشنہ کام تو بھی رہا تشنہ کام
عشق تری انتہا عشق مری انتہا
تو بھی ابھی نا تمام میں بھی ابھی نا تمام
آہ کہ کھویا گیا تجھ سے فقیری کا راز
ورنہ ہے مال فقری سلطنت روم و شام
Nazam
Dhund raha hai farang aish-e-jahan ka dawam
wa-e-tamanna-e-kham wa-e-tamanna-e-kham
 
pir-e-haram ne kaha sun ke meri ruedad
pukhta hai teri fughan ab na ise dil mein tham
 
tha areni go kalim main areni go nahin
us ko taqaza rawa mujh pe taqaza haram
 
garche hai ifsha-e-raaz ahl-e-nazar ki fughan
ho nahin sakta kabhi shewa-e-rindana aam
 
halqa-e-sufi mein zikr be-nam o be-soz-o-saz
main bhi raha tishna-kaam tu bhi raha tishna-kaam
 
ishq teri intiha ishq meri intiha
tu bhi abhi na-tamam main bhi abhi na-tamam
 
aah ki khoya gaya tujh se faqiri ka raaz
warna hai mal-e-faqir saltanat-e-rum-o-sham 

اپنا تبصرہ بھیجیں