Mein Lar Khada Ke Giri, Apne Dhayan Chalti Hoi

Mein Lar Khada Ke Giri, Apne Dhayan Chalti Hoi

Mein Lar Khada Ke Giri, Apne Dhayan Chalti Hoi
Galay se aa ke lagi jab , thakan chalti hoi

Yeh sara khubaru logon ka hai hujoom keh mein
Buri lagon gi bohat, darmiyan chalti hoi

Woh uss kahani se bahir nikalna chahta tha
So rok dena pari dastaan, chalti hoi

Tere khayal ne rasta bhula diya hai mujhe
Mein chhor aai hoon peechay makan, chalti hoi

Yun kar-e-ishq khasaray mein aa gaya hai mera
Keh jaise band hoi ho dukan chalti hoi

Chiragh shaam se aa kar uljhay lagti hai
Hawa ki dekh musalsal zuban chalti hoi

Mein lar khada ke giri, apne dhayan chalti hoi
Galay se aa ke lagi jab , thakan chalti hoi
غزل
میں لڑ کھڑا کے گری ، اپنے دھیان چلتی ہوئی
گلے سے آ کے لگی جب ، تھکان چلتی ہوئی

یہ سارا خوبرو لوگوں کا ہے ہجوم کہ میں
بری لگوں گی بہت ، درمیان چلتی ہوئی

وہ اُس کہانی سے باہر نکلنا چاہتا تھا
سو روک دینا پڑی داستان ، چلتی ہوئی

ترے خیال نے رستہ بھلا دیا ہے مجھے
میں چھوڑا آئی ہوں پیچھے مکان ، چلتی ہوئی

یوں کارِ عشق خسارے میں آ گیا ہے مرا
کہ جیسے بند ہوئی ہو ، دکان چلتی ہوئی

چراغ شام سے آ کر اُلجھے لگتی ہے
ہوا کی دیکھ، مسلسل زبان چلتی ہوئی

میں لڑ کھڑا کے گری ، اپنے دھیان چلتی ہوئی
گلے سے آ کے لگی جب ، تھکان چلتی ہوئی
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں