Aankhon Se Meri Is Liye Lali Nahin Jati

غزل
آنکھوں سے مری اس لیے لالی نہیں جاتی
یادوں سے کوئی رات جو خالی نہیں جاتی
 
اب عمر نہ موسم نہ وہ رستے کہ وہ پلٹے
اس دل کی مگر خام خیالی نہیں جاتی
 
مانگے تو اگر جان بھی ہنس کے تجھے دے دیں
تیری تو کوئی بات بھی ٹالی نہیں جاتی
 
آئے کوئی آ کر یہ ترے درد سنبھالے
ہم سے تو یہ جاگیر سنبھالی نہیں جاتی
 
معلوم ہمیں بھی ہیں بہت سے ترے قصے
پر بات تری ہم سے اچھالی نہیں جاتی
 
ہم راہ ترے پھول کھلاتی تھی جو دل میں
اب شام وہی درد سے خالی نہیں جاتی
 
ہم جان سے جائیں گے تبھی بات بنے گی
تم سے تو کوئی راہ نکالی نہیں جاتی
Ghazal
Aankhon Se Meri Is Liye Lali Nahin Jati
Yaadon se koi raat jo khali nahin jati

Ab umr na mausam na wo raste ki wo palte
Is dil ki magar kham-khayali nahin jati

Mange to agar jaan bhi hans ke tujhe de den
Teri to koi baat bhi tali nahin jati

Aae koi aa kar ye tere dard sambhaale
Hum se to ye jagir sambhaali nahin jati

Malum hamein bhi hain bahut se tere qisse
Par baat teri hum se uchhaali nahin jati

Hamrah tere phool khilati thi jo dil mein
Ab sham wahi dard se khali nahin jati

Hum jaan se jaenge tabhi baat banegi
Tum se to koi rah nikali nahin jati

اپنا تبصرہ بھیجیں