Sochta Hoon Tujhe Dil Se| Khalil Ur Rehman Ghazal

Sochta Hoon Tujhe Dil Se| Khalil Ur Rehman Ghazal

Sochta Hoon Tujhe Dil Se Bhuladon Lekin
Sochta hoon keh tujhe dil se bhuladon kaise

Apni phonkon se mein sholon ko howa kyun don
Apne hathon se nasheman ko jaladon kaise

Sochta hoon keh jisse chand kaha tha mein ne
Woh kisi aur ke aangan mein nikalta kyun hai

Jis ne payi hai tere qarb se duniaye hayat
Woh teri yar ke mausam mein akela kyun hai

Mein ne rakha tha tujhe dil mein khuda ke badle
Tu woh mabood keh masjood peh mayal hi nahi

Ya mere ajaz mohabbat mein kami hai shayad
Ya tera zarf mere pyar ke qabil hi nahi

Sochta hoon keh tere hathon harawon tujhe ko
Sochta hoon mein shikaston ko gawara kar lon

Aisa kam zarf hai duniya mein payamber jis ka
Kyun nah iss den mohabbat se kinara kar lon

Aur bhi bot hain zamane mein parstish ke liye
Waye takhleeq tujhe mein ne tarasha kyun tha

Rog ulfat tou koi jurm nahi hai lekin
Sochta hoon keh mera tou hi maseeha kyun tha

Sochta hoon tujhe dil se bhuladon lekin
Sochta hoon keh tujhe dil se bhuladon kaise
نظم
سوچتا ہوں تجھے دل سے بھلا دوں لیکن
سوچتا ہوں کہ تجھے دل سے بھلادوں کیسے

اپنی پھونکوں سے میں شعلوں کو ہوا کیوں دوں
اپنے ہاتھوں سے نشیمن کو جلاوں کیسے

سوچتا ہوں کہ جسے چاند کہا تھا میں نے
وہ کسی اور کے آنگن میں نکلتا کیوں ہے

جس نے پائی ہے تیرے قرب سے دنیائے حیات
وہ تیری یار کے موسم میں اکیلا کیوں ہے

میں نے رکھا تھا تجھے دل میں خدا کے بدلے
تو وہ معبود کہ مسجود پہ مائل ہی نہیں

یا میرے عجز محبت میں کمی ہے شاید
یا تیرا ظرف میرے پیار کے قابل ہی نہیں

سوچتا ہوں کہ تیرے ہاتھوں ہراوں تجھ کو
سوچتا ہوں میں شکستوں کو گوارا کرلوں

ایسا کم ظرف ہے دنیا میں پیمبر جس کا
کیوں نہ اس دین محبت سے کنارہ کرلوں

اور بھی بت ہیں زمانے میں پر ستش کے لئے
وائے تخلیق تجھے میں نے تراشا کیوں تھا

روگ الفت تو کوئی جرم نہیں ہے لیکن
سوچتا ہوں کہ میرا تو ہی مسیحا کیوں تھا

سوچتا ہوں تجھے دل سے بھلا دوں لیکن
سوچتا ہوں کہ تجھے دل سے بھلادوں کیسے

اپنا تبصرہ بھیجیں