Maa! Mujhe Neend Nahi Ate Hai

نظم
لوری
ماں! مجھے نیند نہیں آتی ہے
اک مدت سے مجھے نیند نہیں آتی ہے
ماں! مجھے لوری سناؤ نا
سولا دو مجھے
ماں! مجھے نیند نہیں آتی ہے
 
رُت جگے اب تو مقدر ہیں پلکوں کا
نیند آئے تو لئے آتی ہے بغداد کی یاد
آنکھ لگتے ہی کوئی بیوہ اٹھا دیتی ہے
پیٹ کتنا ہی بھروں بھوک نہیں مٹتی ہے
 
جلتے بصرہ کی پیاس جگا دیتی ہے مجھے
کوئی قندھارہ کی وادی سے بلاتا ہے مجھے
زکر قندوز کا آئے تو مجھے لگتا ہے
کٹ کر سر کوئی ہنستا ہے، جلاتا ہے مجھے
بم کی آوازیں مجھے کچھ نہیں کہتی ہیں مگر
زخم ان بچوں کے سونے دیتے ہیں مجھے
 
ماں میری آنکھیں تو پھتر کی ہوئی جاتی ہیں
نوجواں لاشے یہ رونے نہیں دیتے ہیں مجھے
میرے سینے پے رکھو ہاتھ
رولا دونا مجھے
 
ماں! مجھے لوری سناؤ نا
سولا دو نا مجھے ..!
ماں! مجھے نیند نہیں آتی ہے
اک مدت سے مجھے نیند نہیں آتی ہے…!

NAZAM

Maa! Mujhe Neend Nahi Ate Hai
Aik Mudat Se Mujhe Neend Nahi Ate Hai
Maa! Mujhe Loory Sunaooo Na
Sula Dona Mujhe
Maa! Mujhe Neend Nahi Ate Hai
 
Rat Jagey Ab Tu Muqadar Hain Meri Pulkon Ka
Neend Aye Tu Liye Ate Hai Bagdad Ki Yaad
Ankh Lagte He Koi Bewa Utha Dete Hai
Pait Kitna He Bharon bhook Nahi Mitti Hai
 
Jalte Basra Ki Mujhe Piyass Jaga Dete Hai
Koi Qandhar Ki Waddi Se Bulta Hai Mujhe
Zikar Qandoz Ka Aye Tu Mujhe Lagta Hai
Kat Ker Sar Koi Hansta Hia,Jalata Hia Mujhe
Bomb Ki Awazain Mujhe Kuch Nahi Kehti Hain Maagar
Zakham In Bacho Ke Sone Nahi Dete Hian Mujhe
 
Maa Meri Ankhian Tu Pather Ki Hue Jate Hian
Nojawaan Lashey Yeh Rone Nahi Dete Hian Mujhe
Mere Seene Per Rakho Hath
Rula Dona Mujhe….!
 
Maa!Mujhe Lorry Sunaooo Na
Sula Dona Mujhe….!
Maa! Mujhe Neend Nahi Ate Hai
Aik Mudat Se Mujhe Neend Nahi Ate Hai….!

اپنا تبصرہ بھیجیں