Zahr Ki Chutki Hi Mil Jae Barae Dard-E-Dil

غزل
زہر کی چٹکی ہی مل جائے برائے درد دل
کچھ نہ کچھ تو چاہئے بابا دوائے درد دل

رات کو آرام سے ہوں میں نہ دن کو چین سے
ہائے ہائے وحشت دل ہائے ہائے درد دل

درد دل نے تو ہمیں بے حال کر کے رکھ دیا
کاش کوئی اور غم ہوتا بجائے درد دل

اس نے ہم سے خیریت پوچھی تو ہم چپ ہو گئے
کوئی لفظوں میں بھلا کیسے بتائے درد دل

دو بلائیں آج کل اپنی شریک حال ہیں
اک بلائے درد دنیا اک بلائے درد دل

زندگی میں ہر طرح کے لوگ ملتے ہیں شعورؔ
آشنائے درد دل نا آشنائے درد دل
Ghazal
Zahr Ki Chutki Hi Mil Jae Barae Dard-E-Dil
kuchh na kuchh to chahiye baba dawa-e-dard-e-dil

raat ko aaram se hun main na din ko chain se
hae hae wahshat-e-dil hae hae dard-e-dil

dard-e-dil ne to hamein behaal kar ke rakh diya
kash koi aur gham hota bajae dard-e-dil

us ne hum se KHairiyat puchhi to hum chup ho gae
koi lafzon mein bhala kaise batae dard-e-dil

do balaen aaj kal apni sharik-e-haal hain
ek bala-e-dard-e-duniya ek bala-e-dard-e-dil

zindagi mein har tarah ke log milte hain ‘shuur’
aashna-e-dard-e-dil na-ashna-e-dard-e-dil

اپنا تبصرہ بھیجیں