Taza Phir Danish-E-Hazir Ne Kiya Sehr-E-Qadim

نظم
تازہ پھر دانش حاضر نے کیا سحر قدیم
گزر اس عہد میں ممکن نہیں بے چوب کلیم
عقل عیار ہے سو بھیس بنا لیتی ہے
عشق بیچارہ نہ ملا ہے، نہ زاہد نہ حکیم
عیش منزل ہے غریبان محبت پہ حرام
سب مسافر ہیں بظاہر نظر آتے ہیں مقیم
ہے گراں سیر غم راحلہ و زاد سے تو
کوہ و دریا سے گزر سکتے ہیں مانند نسیم
مرد درویش کا سرمایہ ہے آزادی و مرگ
ہے کسی اور کی خاطر یہ نصاب زر و سیم
Taza phir danish-e-hazir ne kiya sehr-e-qadim
guzar is ahd mein mumkin nahin be-chob-e-kalim
 
aql ayyar hai sau bhes bana leti hai
ishq bechaara na mulla hai na zahid na hakim
 
aish-e-manzil hai ghariban-e-mohabbat pe haram
sab musafir hain ba-zahir nazar aate hain muqim
 
hai garan-sair gham-e-rahila-o-zad se tu
koh o dariya se guzar sakte hain manind-e-nasim
 
mard-e-darwesh ka sarmaya hai aazadi o marg
hai kisi aur ki khatir ye nisab-e-zar-o-sim

اپنا تبصرہ بھیجیں