Suna Hai Khail Bigartay Hain Khud Pasandi Se

Suna Hai Khail Bigartay Hain Khud Pasandi Se

Suna Hai Khail Bigartay Hain Khud Pasandi Se
So hum ne kaam nikalay niaz mandi se

Mohabbaton ka faqt aik deen hota hai
Guraiz kyun nahi karte ho firqa bandi se

Tamam dard galay aakay lag gaye thay mere
Bas aik bar sadaa di thi dard mandi se

Dua ka ward bhi jari hai ehtiyat bhi hai
Khuda bachaye ga ab dil ki shar pasandi se

Yeh janne ke liye kaisay cheez tootti hai
Mein bar bar girai gai bulandi se

Suna hai khail bigartay hain khud pasandi se
So hum ne kaam nikalay niaz mandi se
غزل
سنا ہے کھیل بگڑتے ہیں خود پسندی سے
سو ہم نے کام نکالے ، نیاز مندی سے

محبتوں کا فقط ایک دین ہوتا ہے
گریز کیوں نہیں کرتے ہو فرقہ بندی سے

تمام درد گلے آکے لگ گئے تھے میرے
بس ایک بار صدا دی تھی درد مندی سے

دعا کا ورد بھی جاری ہے احتیاط بھی ہے
خدا بچائے گا اب دل کی شر پسندی سے

یہ جاننے کےلیے، کیسے چیز ٹوٹتی ہے
میں بار بار گرائی گئی بلندی سے

سنا ہے کھیل بگڑتے ہیں خود پسندی سے
سو ہم نے کام نکالے ، نیاز مندی سے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں