Akhri andhi nay sab koch phely jaisa kar diya

 غزل
آخری آندھی نے سب کچھ پہلے جیسا کر دیا
پردے میلے کر دیے کالین گندا کر دیا

میرے سارے لوگ رفتہ رفتہ اُس کے ہو گئے
مجھ کو اُس کی محفلوں نے اور تنہا کر دیا

آسمانوں سے ستارے اور قبروں سے گلاب
مجھ سے پوچھو میں نے اُس کو کیا نہیں لا کر دیا

پہلے اُس کو لے کے اس دنیا میں کتنا جھوٹ ہے
کیا ہوا میں نے اگر تھوڑا اضافہ کر دیا

آج سے کچھ سال پہلے ایک جتنی عمر تھی
وقت نے اُس کو جواں اور مجھے بوڑھا کر دیا
Ghazal
Akhri andhi nay sab koch phely jaisa kar diya
Parday mailay kar deay clean ganda kar diya

Mary saray log rafta rafta us ky ho gaye
Mujh ko us ki mehfilon nay aur tanhaa kr diya

Assmano sy sitary aur qabro sy ghulab
Mujh sy pocho main nay us ko kiya nahi la kr diya

Pehlay us ko lay kay is duniya main kitna jhoot hai
Kiya howa main nay agar thora izafa kar diya

Aaj sy kuch saal phelay aik jitne umar thi
Waqt nay us ko jawan aur mujhy burha kr diya

اپنا تبصرہ بھیجیں