Khamoshi Se Mazaq Ishq Penhaan | Ehsan Danish

Khamoshi Se Mazaq Ishq Penhaan | Ehsan Danish

Khamoshi Se Mazaq Ishq Penhaan Ho Nahi Sakta
Yeh shola hai chiragh zir damaan ho nahi sakta

Dar-o-deewar deewano ka rishta chhor dete hain
Hamesha ko junoon majbor zindaan ho nahi sakta

Hudood bandagi mein dil ko jo aasoodgi de-day
Woh sajda bais takmeel insaan ho nahi sakta

Mein deewana bhala mujh ko mere sahra mein pohanchado
Keh mein paband aadab-e-gulistaan ho nahi sakta

Usi ka silsila hai mera chaak-e-jama hasti
Girebaan tak faqt chak girebaan ho nahi sakta

Yeh gustakhi tou hai lekin mein us jalwe ka talib hoon
Baqeed rang-o-soorat mein numaya ho nahi sakta

Khamoshi se mazaq ishq penhaan ho nahi sakta
Yeh shola hai chiragh zir damaan ho nahi sakta
غزل
خموشی سے مذاق عشق پنہاں ہو نہیں سکتا
یہ شعلہ ہے چراغ زیر داماں ہو نہیں سکتا

در و دیوار دیوانوں کا رشتہ چھوڑ دیتے ہیں
ہمیشہ کو جنوں مجبور زنداں ہو نہیں سکتا

حدود بندگی میں دل کو جو آسودگی دیدے
وہ سجدہ باعث تکمیل انساں ہو نہیں سکتا

میں دیوانہ بھلا مجھ کو میرے صحرا میں پہنچا دو
کہ میں پابند آدبِ گلستاں ہو نہیں سکتا

اُسی کا سلسلہ ہے میرا چاک جامہ ہستی
گریباں تک فقط چاک گریباں ہو نہیں سکتا

یہ گستاخی تو ہے لیکن میں اُس جلوے کا طالب ہوں
بقید رنگ و صورت میں نمایاں ہو نہیں سکتا

خموشی سے مذاق عشق پنہاں ہو نہیں سکتا
یہ شعلہ ہے چراغ زیر داماں ہو نہیں سکتا

اپنا تبصرہ بھیجیں