Toot Bhi Jaon Tou Tera Kiya Hai

Toot Bhi Jaon Tou Tera Kiya Hai

Toot Bhi Jaon Tou Tera Kiya Hai
Rait se puchh aaina kiya hai

Iss ke saye mein bethne se qabal
Dekho deewar par likha kiya hai

Aik darya ko par karne ke baad
Jaib mein rait ke siwa kiya hai

Phir mere samne usi ka zikar
Aap ke saath masla kiya hai

Toot bhi jaon tou tera kiya hai
Rait se puchh aaina kiya hai
غزل
ٹوٹ بھی جاؤں تو تیرا کیا ہے
ریت سے پوچھ آئینہ کیا ہے

اس کے سائے میں بیٹھنے سے قبل
دیکھو دیوار پر لکھا کیا ہے

ایک دریا کو پار کرنے کے بعد
جیب میں ریت کے سوا کیا ہے

پھر مرے سامنے اُسی کا ذکر
آپ کے ساتھ مسئلہ کیا ہے

ٹوٹ بھی جاؤں تو تیرا کیا ہے
ریت سے پوچھ آئینہ کیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں