Ek Shakhs Ke Hath Mein Tha Sab Kuch Mera

Ek Shakhs Ke Hath Mein Tha Sab Kuch Mera

Ek Shakhs Ke Hath Mein Tha Sab Kuch Mera Khulna Bhi Murjhana Bhi
Rota tha tou raat ujar jati hansta tha tou din ban jata tha

Mein rab say rabte mein rehta mumkin hai keh us se rabta ho
Mujhe hath uthana parte thay tab ja ke wo fon uthata tha

Mujhe aaj bhi yad hai bachpan mein kabhi us par nazar agar parti
Mere baste se phool barste thay meri takhti peh dil ban jata tha

Ek shakhs ke hath mein tha sab kuch mera khulna bhi murjhana bhi
Rota tha tou raat ujar jati hansta tha tou din ban jata tha
غزل
اک شخص کے ہاتھ میں تھا سب کچھ میرا کھلنا بھی مرجھانا بھی
روتا تھا تو رات اُجڑ جاتی ہنستا تھا تو دن بن جاتا تھا

میں رب سے رابطے میں رہتا ممکن ہے کہ اس سے رابطہ ہو
مجھے ہاتھ اٹھانا پڑتے تھے تب جا کے وہ فون اٹھاتا تھا

مجھے آج بھی یاد ہے بچپن میں کبھی اس پر نظر اگر پڑتی
میرے بستے سے پھول برستے تھے میری تختی پہ دل بن جاتا تھا

اک شخص کے ہاتھ میں تھا سب کچھ میرا کھلنا بھی مرجھانا بھی
روتا تھا تو رات اُجڑ جاتی ہنستا تھا تو دن بن جاتا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں