Hamari Sachi Hikayat Bhi Mustard Afsos-Komal Joya

Hamari Sachi Hikayat Bhi Mustard Afsos-Komal Joya

Hamari Sachi Hikayat Bhi Mustard Afsos
Kisi ka jhoot bhi hota hai mastand afsos

Buray dinon mein nazar ko chura liya jaye
Yeh dosti hai tu afsos dost sada afsos

Hamein tu maan tha apni sukhan wari peh bohat
Tu yeh sanad bhi hai baikar ki sanad afsos

Koi hawaon ki saazish samjh nahi paya
Chiragh kehta raha mustaqil madad afsos

Malal karne ko lakhon jawaz hain mere pass
Magar yeh aankhen hain girye ko do adad afsos

Jisay bhi dekhye parten chirhaye phirta hai
Nahi hai koi bhi tafreeq naik-o-bad afsos

Utar raha tha udaasi ka rang hathon par
Bikhar rahe thay mohabbat ke khal-o-khud afsos

Hum hi ko rakha hai thokar peh zindagi ne sada
Hum hi hayat ke mujrim hain naamzad afsos

Hamari sachi hikayat bhi mustard afsos
Kisi ka jhoot bhi hota hai mastand afsos
غزل
ہماری سچی حکایت بھی مسترد افسوس
کسی کا جھوٹ بھی ہوتا ہے مستند افسوس

برے دنوں میں نظر کو چُرا لیا جائے
یہ دوستی ہے تو افسوس دوست صدا افسوس

ہمیں تو مان تھا اپنی سخن وری پہ بہت
تو یہ سند بھی ہے بیکار کی سند افسوس

کوئی ہواؤں کی سازش سمجھ نہیں پایا
چراغ کہتا رہا مستقل مدد افسوس

ملال کرنے کو لاکھوں جواز ہیں مرے پاس
مگر یہ آنکھیں ہیں گریے کو دو عدد افسوس

جسے بھی دیکھیے پرتیں چڑھائے پھرتا ہے
نہیں ہے کوئی بھی تفریقِ نیک و بد افسوس

اُتر رہا تھا اداسی کا رنگ ہاتھوں پر
بکھر رہے تھے محبت کے خال و خد افسوس

ہم ہی کو رکھا ہے ٹھوکر پہ زندگی نے سدا
ہم ہی حیات کے مجرم ہیں نامزد افسوس

ہماری سچی حکایت بھی مسترد افسوس
کسی کا جھوٹ بھی ہوتا ہے مستند افسوس

اپنا تبصرہ بھیجیں