Tajurba Tha So Dua Ki Takeh Nuqsan Na Ho

Tajurba Tha So Dua Ki Takeh Nuqsan Na Ho

Tajurba Tha So Dua Ki Takeh Nuqsan Na Ho
Ishq mazdor ko mazdori ke doran na ho

Mein usay dekh na pa-ta tha pareshani mein
So dua karta tha mar jaye pareshan na ho

Gaon mein dor ki kabhi siski bhi suni jati hai
Sab pahunchte hain bhale aane ka elan na ho

Ek raqasa ne ek umer yahan raqs kia
Dil ki dhak dhak mein chunan chun ho tou heran na ho

Ab taawuz ko badal dane mein kia raye hai
Jahan shaitan likha hai waha insan na ho

Shukaria mujh ko na dekha meri mushakil hal ki
Meri koshish bhi yahi thi meri pehchan na ho

Tajurba tha so dua ki takeh nuqsan na ho
Ishq mazdor ko mazdori ke doran na ho
غزل
تجربہ تھا, سو دعا کی تاکہ نقصان نہ ہو
عشق, مزدور کو, مزدوری کے دوران نہ ہو

میں اُسے دیکھ نہ پاتا تھا پریشانی میں
سو دعا کرتا تھا مر جائے, پریشان نہ ہو

گاؤں میں دور کی بھی سسکی بھی سنی جاتی ہے
سب پہنچتے ہے بھلے آنے کا اعلان نہ ہو

ایک رقاصہ نے اِک عمر یہاں رقص کیا
دل کی دھک دھک میں چھنن چھن ہو تو حیران نہ ہو

اب تعوذ کو بدل دینے میں کیا رائے ہے
جہاں شیطان لکھا ہے وہاں انسان نہ ہو

شکریہ مجھ کو نہ دیکھا میری مشکل حل کی
میری کوشش بھی یہی تھی میری پہچان نہ ہو

تجربہ تھا, سو دعا کی تاکہ نقصان نہ ہو
عشق, مزدور کو, مزدوری کے دوران نہ ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں