Badli Na Us Ki Ruh Kisi Inqilab Mein

Ghazal
Badli Na Us Ki Ruh Kisi Inqilab Mein
Kia cheez zinda hai dil ke rabab mein
 
Lafzon mein bolta hai rag-e-asar ka lahoo
Likhta hai dast gayoub koi es kitab mein 
 
To dhondati hai ab kise aae shaam e zindagi
Do din tu kharch ho gaye gum-e-hisab mein
 
Yaran zood nasha ka alam yeh hai khe aj
Yeh raat doob jaye gi jaam-e-sharab mein
 
Ninedin batkhti phirti hain galiyon mein sari raat
Yeh sheher chup ke raat ko sota hai aab mein
 
Yeh aj rahaa bhool ke aye kidhar se ap
Yeh khawab mein ne raat hi dekha tha khawab mein
 
Badli na us ki ruh kisi inqilab mein
Kia cheez zinda hai dil ke rabab mein
غزل
بدلی نہ اس کی روح کسی انقلاب میں
کیا چیز زندہ بند ہے دل کے رباب میں 
 
لفظوں میں بولتا ہے رگ عصر کا لہو
لکھتا ہے دست غیوب کوئی اس کتاب میں 
 
تو ڈھونڈتی ہے اب کسے اے شام زندگی
دو دن تو خرچ ہو گئے غم کے حساب میں 
 
یاران زود نشہ کا عالم یہ ہے کہ آج
یہ رات ڈوب جائے گی جام شراب میں 
 
نیندیں بھٹکتی پھرتی ہیں گلیوں میں ساری رات
یہ شہر چھپ کے رات کو سوتا ہے آب میں 
 
یہ آج راہ بھول کے آئے کدھر سے آپ
یہ خواب میں نے رات ہی دیکھا تھا خواب میں
 
بدلی نہ اس کی روح کسی انقلاب میں
کیا چیز زندہ بند ہے دل کے رباب میں

اپنا تبصرہ بھیجیں