Kada Hai Din Badi Hai Raat Jab Se Tum Nahin Aae

غزل
کڑا ہے دن بڑی ہے رات جب سے تم نہیں آئے
دگرگوں ہیں مرے حالات جب سے تم نہیں آئے

لگی رہتی ہے اشکوں کی جھڑی گرمی ہو سردی ہو
نہیں رکتی کبھی برسات جب سے تم نہیں آئے

نہ کی جاتی ہے اوروں سے ملاقات ایک لمحے کو
نہ ہو پاتی ہے خود سے بات جب سے تم نہیں آئے

پتا چلتا نہیں تھا ساعتوں کا جب تم آتے تھے
گزرتے ہیں گراں لمحات جب سے تم نہیں آئے

نہ گھر والے نہ ہم سایے نہ احباب و اعزا ہیں
یہ دل ہے یا خدا کی ذات جب سے تم نہیں آئے
Ghazal
Kada Hai Din Badi Hai Raat Jab Se Tum Nahin Aae
digar-gun hain mere haalat jab se tum nahin aae

lagi rahti hai ashkon ki jhadi garmi ho sardi ho
nahin rukti kabhi barsat jab se tum nahin aae

na ki jati hai auron se mulaqat ek lamhe ko
na ho pati hai khud se baat jab se tum nahin aae

pata chalta nahin tha saaton ka jab tum aate the
guzarte hain garan lamhat jab se tum nahin aae

na ghar wale na ham-sae na ahbab-o-aizza hain
ye dil hai ya khuda ki zat jab se tum nahin aae

اپنا تبصرہ بھیجیں