Yeh Jah-O-Hasham Nahi Rahe Ga

Yeh Jah-O-Hasham Nahi Rahe Ga

Yeh Jah-O-Hasham Nahi Rahe Ga
Yeh tbal-o-ilm nahi rahe ga

Aye gi zaroor aaye gi subah
Yeh ahd-e-sitam nahi rahe ga

Palte ga palat aaye ga din
Adbar-o-alam nahi rahe ga

Aankhon mein saje gay khawab sab khawab
Daman koi nam nahi rahe ga

Alam mein kharaba-e-khush aasar
Qamat tera km nahi rahe ga

Ya bat rahe gi ahl-e-haq ki
Ya phir yeh qalam nahi rahe ga

Yeh jah-o-hasham nahi rahe ga
Yeh tbal-o-ilm nahi rahe ga
غزل
یہ جاہ و حشم نہیں رہے گا
یہ طبل و علم نہیں رہے گا

آئے گی ضرور آئے گی صبح
یہ عہدِ ستم نہیں رہے گا

پلٹے گا پلٹ آئے گا دن
ادبار و الم نہیں رہے گا

آنکھوں میں سجیں گے خواب سب خواب
دامن کوئی نم نہیں رہے گا

عالم میں خرابہء خوش آثار
قامت ترا کم نہیں رہے گا

یا بات رہے گی اہلِ حق کی
یا پھر یہ قلم نہیں رہے گا

یہ جاہ و حشم نہیں رہے گا
یہ طبل و علم نہیں رہے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں