Hijr Ki Dhoop Mein Chhaon Jaisi Baatein Karte Hain

Hijr Ki Dhoop Mein Chhaon Jaisi Baatein Karte Hain

Hijr Ki Dhoop Mein Chhaon Jaisi Baatein Karte Hain
Aanso bhi tou maon jaisi baatein karte hain

Rasta dekhne wali aankhon ke unhone khawab
Piyas mein bhi dariyaon jaisi baatein karte hain

Khud ko bikharte dekhte hain kuch kar nahi patay hain
Phir bhi log Khudaon jaisi baatein karte hain

Ek zara si jot ke bal par andhearon se bair
Pagal diye hawaon jaisi baatein karte hain

Rang se khushbon ka nata toota jata hai
Phool se log Khizaon jaisi baatein karte hain

Hum ne chup rahne ka ahd kya hai aur kam zarf
Hum se sukhan araon jaisi baatein karte hain

Hijr ki dhoop mein chhaon jaisi baatein karte hain
Aanso bhi tou maon jaisi baatein karte hain
غزل
ہجر کی دھوپ میں چھاوں جیسی باتیں کرتے ہیں
آ نسو بھی تو ماوں جیسی باتیں کرتے ہیں

رستہ دیکھنے والی انکھوں کے انہونے خواب
پیاس میں بھی دریاؤں جیسی باتیں کرتے ہیں

خوکوبکھرتے دیکھتے ہیں کچھ کرنہیں پاتے ہیں
پھر بھی لوگ خداؤں جیسی باتیں کرتے ہیں

ایک ذرا سی جوت کے بل پر اندھیاروں سے بیر
پاگل دیئے ہواؤں جیسی باتیں کرتے ہیں

رنگ سے خوشبوؤں کا ناتا ٹوٹتا جات ہے
پھول سےلوگ خزاؤں جیسی باتیں کرتے ہیں

ہم نے چپ رہنے کا عہد کیا ہے اور کم ظرف
ہم سے سخن آراؤں جیسی باتیں کرتے ہیں

ہجر کی دھوپ میں چھاوں جیسی باتیں کرتے ہیں
آ نسو بھی تو ماوں جیسی باتیں کرتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں