Tum Aa Gaye Ho To Kyun Intezar-E-Sham Karen

غزل
تم آ گئے ہو تو کیوں انتظار شام کریں
کہو تو کیوں نہ ابھی سے کچھ اہتمام کریں

خلوص و مہر و وفا لوگ کر چکے ہیں بہت
مرے خیال میں اب اور کوئی کام کریں

یہ خاص و عام کی بیکار گفتگو کب تک
قبول کیجیے جو فیصلہ عوام کریں

ہر آدمی نہیں شائستۂ رموز سخن
وہ کم سخن ہو مخاطب تو ہم کلام کریں

جدا ہوئے ہیں بہت لوگ ایک تم بھی سہی
اب اتنی بات پہ کیا زندگی حرام کریں

خدا اگر کبھی کچھ اختیار دے ہم کو
تو پہلے خاک نشینوں کا انتظام کریں

رہ طلب میں جو گمنام مر گئے ناصرؔ
متاع درد انہی ساتھیوں کے نام کریں
Ghazal
Tum Aa Gaye Ho To Kyun Intezar-E-Sham Karen
Kaho To Kyun Na Abhi Se Kuch Ehtimam Karen
 
Khulus-O-Mehr-O-Wafa Log Kar Chuke Hain Bahut
Mere Khayal Mein Ab Aur Koi Kaam Karen
 
Ye Khas-O-Aam Ki Be-Kar Guftugu Kab Tak
Qubul Kijiye Jo Faisla Awam Karen
 
Har Aadmi Nahi Shaista-E-Rumuz-E-Sukhan
Wo Kam-Sukhan Ho Mukhatab To Ham-Kalam Karen
 
Juda Hue Hain Bahut Log Ek Tum Bhi Sahi
Ab Itni Baat Pe Kya Zindagi Haram Karen
 
Khuda Agar Kabhi Kuch Ikhtiyar De Hum Ko
Tu Pahle Khak-Nashinon Ka Intizam Karen
 
Rah-E-Talab Mein Jo Gumnam Mar Gae ‘Nasir’
Mata-E-Dard Unhi Sathiyon Ke Nam Karen

اپنا تبصرہ بھیجیں