Bhidh Mein Ek Ajnabi Ka Samna Achchha Laga

بھیڑ میں اک اجنبی کا سامنا اچھا لگا
سب سے چھپ کر وہ کسی کا دیکھنا اچھا لگا
سرمئی آنکھوں کے نیچے پھول سے کھلنے لگے
کہتے کہتے کچھ کسی کا سوچنا اچھا لگا
بات تو کچھ بھی نہیں تھیں لیکن اس کا ایک دم
ہاتھ کو ہونٹوں پہ رکھ کر روکنا اچھا لگا
چائے میں چینی ملانا اس گھڑی بھایا بہت
زیر لب وہ مسکراتا شکریہ اچھا لگا
دل میں کتنے عہد باندھے تھے بھلانے کے اسے
وہ ملا تو سب ارادے توڑنا اچھا لگا
بے ارادہ لمس کی وہ سنسنی پیاری لگی
کم توجہ آنکھ کا وہ دیکھنا اچھا لگا
نیم شب کی خاموشی میں بھیگتی سڑکوں پہ کل
تیری یادوں کے جلو میں گھومنا اچھا لگا
اس عدوئے جاں کو امجدؔ میں برا کیسے کہوں
جب بھی آیا سامنے وہ بے وفا اچھا لگا
bhidh mein ek ajnabi ka samna achchha laga
sab se chhup kar wo kisi ka dekhna achchha laga

surmai aankhon ke niche phul se khilne lage
kahte kahte kuchh kisi ka sochna achchha laga

baat to kuchh bhi nahin thin lekin us ka ek dam
hath ko honton pe rakh kar rokna achchha laga

chae mein chini milana us ghadi bhaya bahut
zer-e-lab wo muskuraata shukriya achchha laga

dil mein kitne ahd bandhe the bhulane ke use
wo mila to sab irade todna achchha laga

be-irada lams ki wo sansani pyari lagi
kam tawajjoh aankh ka wo dekhna achchha laga

nim-shab ki khamoshi mein bhigti sadkon pe kal
teri yaadon ke jilau mein ghumna achchha laga

is adu-e-jaan ko ‘amjad’ main bura kaise kahun
jab bhi aaya samne wo bewafa achchha laga

اپنا تبصرہ بھیجیں