Na Tujh Se Hai Na Gila Aasman Se Hoga

غزل
نہ تجھ سے ہے نہ گلا آسمان سے ہوگا
تاری جدائی کا جھگڑا جہان سے ہوگا

تمہارے میرے تعلق کا لوگ پوچھتے ہیں
کہ جیسے فیصلہ میرے بیان سے ہوگا

اگر یوں ہی مجھے رکھا گیا اکیلے میں
بر آمد اور کوئی اس مکان سے ہوگا

جدائی طے تھی مگر یہ کبھی نہ سوچا تھا
کہ تو جدا بھی جداگانہ شان سے ہوگا

گزر رہے ہیں مرے دن اسی تفاخر میں
کہ اگلا قیس مرے خاندان سے ہوگا
Ghazal
Na Tujh Se Hai Na Gila Aasman Se Hoga
Teri judai ka jhagda jahan se hoga

Tumhaare mere talluq ka log puchhte hain
Ki jaise faisla mere bayan se hoga

Agar yunhi mujhe rakkha gaya akele mein
Baramad aur koi us makan se hoga

Judai tai thi magar ye kabhi na socha tha
Ki tu juda bhi judagana shan se hoga

Guzar rahe hain mere din isi tafakhur mein
Ki agla qais mere khandan se hoga

اپنا تبصرہ بھیجیں