Barish Hui To Phulon Ke Tan Chaak Ho Gae

غزل
بارش ہوئی تو پھولوں کے تن چاک ہو گئے
موسم کے ہاتھ بھیگ کے سفاک ہو گئے

بادل کو کیا خبر ہے کہ بارش کی چاہ میں
کیسے بلند و بالا شجر خاک ہو گئے

جگنو کو دن کے وقت پرکھنے کی ضد کریں
بچے ہمارے عہد کے چالاک ہو گئے

لہرا رہی ہے برف کی چادر ہٹا کے گھاس
سورج کی شہ پہ تنکے بھی بے باک ہو گئے

بستی میں جتنے آب گزیدہ تھے سب کے سب
دریا کے رخ بدلتے ہی تیراک ہو گئے

سورج دماغ لوگ بھی ابلاغ فکر میں
زلف شب فراق کے پیچاک ہو گئے

جب بھی غریب شہر سے کچھ گفتگو ہوئی
لہجے ہوائے شام کے نمناک ہو گئے

 Ghazal
Barish Hui To Phulon Ke Tan Chaak Ho Gae
Mausam ke hath bhig ke saffak ho gae

Baadal ko kya khabar hai ki barish ki chah mein
Kaise buland-o-baala shajar khak ho gae

Jugnu ko din ke waqt parakhne ki zid karen
Bachche hamare ahd ke chaalak ho gae

Lahra rahi hai barf ki chadar hata ke ghas
Suraj ki shah pe tinke bhi bebak ho gae

Basti mein jitne aab-gazida the sab ke sab
Dariya ke rukh badalte hi tairak ho gae

Suraj-dimagh log bhi ablagh-e-fikr mein
Zulf-e-shab-e-firaq ke pechaak ho gae

Jab bhi gharib-e-shahr se kuchh guftugu hui
Lahje hawa-e-sham ke namnak ho gae

اپنا تبصرہ بھیجیں