Jo Baat Kehtay Drtay Thay Sab Tu Wo Baat Keh Day

Ghazal
Jo Baat Kehtay Drtay Thay Sab Tu Wo Baat Keh Day
Itni andhari the na kabhi pehile raat lekh

Jin se qasiday lekhe thay wo phank day qalam
Phir khoon e dil se suchay qalam ki sifaat lekh

Jo roaz naamo mein roaz pati nahi jagha
Jo roaz har jagha ki hai wardat lekh

Jo waqiaat ho chuke un ka to zikar hai
Lakin jo honay chahyia wo waqiaat lekh
غزل
جو بات کہتے ڈرتے تھے سب تو وہ بات لکھ
اتنی اندھیری تھی نہ کبھی پہلے رات لکھ

جن سے قصیدے لکھے تھے وہ پھینک دے قلم
پھر خونِ دل سے سچے قلم کی صفات لکھ

جو روز ناموں میں روز پاتی نہیں جگہ
جو روز ہر جگہ کی ہے وہ واردات لکھ

جو وقعات ہو چکے اُن کا تو زکر ہے
لیکن جو ہونے چاہیے وہ وقعات لکھ

اپنا تبصرہ بھیجیں