Jo Guzishta Hain Sar E Ashk Baha Sakti Hai

Jo Guzishta Hain Sar E Ashk Baha Sakti Hai

Jo Guzishta Hain Sar E Ashk Baha Sakti Hai
Aankh jab chahay naye khwab bana sakti hai

Meri zardabi mera juram nah samjhi jaye
Yeh khazaan shahr ke har phool peh aa sakti hai

Khoshk patton ki tarah zehin mein bikhri yaaden
Aik chingari yahaan aag laga sakti hai

Mera likha koi taqdeer ka likha to nahi
Mere likhay ko yeh taqdeer mitta sakti hai

Zindagi tujh peh bara naaz hai par janti hoon
Tou mere maan ko mitti mein mila sakti hai

Mil gaya rad mohabbat ka wazifa lekin
Yeh amal karte hoye jan bhi ja sakti hai

Jo guzishta hain sar ashk naha sakti hai
Aankh jab chahay naye khwab bana sakti hai
غزل
جو گزشتہ ہیں سرِ اشک بہا سکتی ہے
آنکھ جب چاہے نئے خواب بنا سکتی ہے

میری زردابی مرا جرم نہ سمجھی جائے
یہ خزاں شہر کے ہر پھول پہ آ سکتی ہے

خشک پتوں کی طرح ذہن میں بکھری یادیں
ایک چنگاری یہاں آگ لگا سکتی ہے

میرا لکھا کوئی تقدیر کا لکھا تو نہیں
میرے لکھے کو یہ تقدیر مٹا سکتی ہے

زندگی تجھ پہ بڑا ناز ہے پر جانتی ہوں
تو مرے مان کو مٹی میں ملا سکتی ہے

مل گیا رد محبت کا وظیفہ لیکن
یہ عمل کرتے ہوئے جان بھی جاسکتی ہے

جو گزشتہ ہیں سرِ اشک نہا سکتی ہے
آنکھ جب چاہے نئے خواب بنا سکتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں