Nahi Yeh Kafi Keh Mashkiza Bhar Diya Jaye

Nahi Yeh Kafi Keh Mashkiza Bhar Diya Jaye

Nahi Yeh Kafi Keh Mashkiza Bhar Diya Jaye
Jidhar hai pyaas ki shiddat, udhar diya jaye

Qabool hai basar-o-chasham raigani magar
Kabhi kabhi to dua mein asar diya jaye

Yeh zabt-e-gham hamein pathar banay wala hai
Hamein bhi ronay peh majboor kar diya jaye

Hisar tootay khamoshi ki aamriat ka
Fizaye jaan ko sadaaon se bhar diya jaye

Chiragh khasta, mahalaat mein buray nah lagen
Hamein shikasta makanoon peh dhar diya jaye

Sabaq yeh seekha hai jahla-e-se guftagu kar ke
Jawab jitna bhi ho mukhtasar, diya jaye

Hamein yeh tar keh jawahir se qeemati hai mian
Zyada kuch nah sahi, ik shajar diya jaye

Nahi yeh kafi keh mashkiza bhar diya jaye
Jidhar hai pyaas ki shiddat, udhar diya jaye
غزل
نہیں یہ کافی کہ مشکیزہ بھر دیا جائے
جدھر ہے پیاس کی شدت، اُدھر دیا جائے

قبول ہے بسر و چشم رائیگانی مگر
کبھی کبھی تو دعا میں اثر دیا جائے

یہ ضبطِ غم ہمیں پتھر بنانے والا ہے
ہمیں بھی رونے پہ مجبور کر دیا جائے

حصار ٹوٹے خموشی کی آمریت کا
فضائے جاں کو صداؤں سے بھر دیا جائے

چراغ خستہ، محلات میں برے نہ لگیں
ہمیں شکستہ مکانوں پہ دھر دیا جائے

سبق یہ سیکھا ہے جہلاء سے گفتگو کر کے
جواب جتنا بھی ہو مختصر، دیا جائے

ہمیں یہ تر کہ جواہر سے قیمتی ہے میاں
زیادہ کچھ نہ سہی، اک شجر دیا جائے

نہیں یہ کافی کہ مشکیزہ بھر دیا جائے
جدھر ہے پیاس کی شدت، اُدھر دیا جائے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں