Tumhein Kuch Yaad Hai Jaana| Khalil Ur Rehman

Tumhein Kuch Yaad Hai Jaana| Khalil Ur Rehman

Tumhein Kuch Yaad Hai Jaana
Woh pichhli barishon mein hum

Bare nadan hote thay
Sabhon ki aankh se bach kar

Purani kapion se hum
Warq kuch noch letay thay

Hum ik kasti banate thay
Woh pani par chalatay thay

Hamein lagta tha jisay hum
Usi kasti mein bethay hain

Woh kashti paar jati thi
Tu hum bhi paar jate thay

Woh kashti doob jati thi
To hum bhi doob jate thay

Tumhein kuch yaad hai jaana
Dilon ki parsayi par sahefay jab utarte thay
Sare loh junoon tham kar

Lahoo ki roshnas se
Tumhara naam likhte thay

Mohabbat tere sajdon mein
Hamari raat katti thi

Bujhay dil ki namzon mein
Tumhein hum yad karte thay

Zamani se juda ho tum
Khuda suraat mein dhal jaye

To bas mere khuda ho tum
Tumhein kuch yad hai jaana
نظم
تمہیں کچھ یاد ہے جاناں
وہ پچھلی بارشوں میں ہم

بڑے نادان ہوتے تھے
سبھوں کی آنکھ سے بچ کر

پرانی کاپیوں سے ہم
ورق کچھ نوچ لیتے تھے

ہم اِک کشتی بناتے تھے
وہ پانی پر چلاتے تھے

ہمیں لگتا تھا جسے ہم
اُسی کشتی میں بیٹھے ہیں

وہ کشتی پار جاتی تھی
تو ہم بھی پار جاتے تھے

وہ کشتی ڈوب جاتی تھی
تو ہم بھی ڈوب جاتے تھے

تمہیں کچھ یاد ہے جاناں
تمہیں کچھ یاد ہے جاناں

دلوں کی پارسائی پر صحیفے جب اُتر تے تھے
سرے لوح جنوں تھم کر

لہو کی روشناس سے
تمہارا نام لکھتے تھے

محبت تیرے سجدوں میں
ہماری رات کٹتی تھی

بُجھے دل کی نمازوں میں
تمہیں ہم یاد کرتے تھے

زمانے بھر سے کہتے تھے
زمانے سے جدا ہو تم

خدا صورت میں ڈھل جائے
تو بس میرے خدا ہو تم
تمہیں کچھ یاد ہے جاناں

اپنا تبصرہ بھیجیں