Ghar Bhi Haatho Se Gaya Saath Hi Ghar Ki Qeemat

Ghar Bhi Haatho Se Gaya Saath Hi Ghar Ki Qeemat

Ghar Bhi Haatho Se Gaya Saath Hi Ghar Ki Qeemat
Hum ne kuch aisay chukai hai safar ki qeemat

Mein andheray ko andhera hi pukarongi sada
Juram hai yeh to lagaday mere sar ki qeemat

Koi darwaish se itna bhi nahi pooch saka
Baich kar aaye ho duniya toi kidhar ki qeemat

Yeh ujale yuhi qismat mein nahi aaye hain
Kuch chiraghon ne ada ki hai seher ki qeemat

Kaisay garye se nami khainch ke bhar di iss mein
Aankh se pooch mere misraa-e-tar ki qeemat

Itni qeemat mein naya beej nahi aata hai
Jitni logon ne lagai hai shajar ki qeemat

Iss qadar khasta makani hai meri basti mein
Koi awqat darichay ki nah dar ki qimat

Ghar bhi haatho se gaya saath hi ghar ki qeemat
Hum ne kuch aisay chukai hai safar ki qeemat
غزل
گھر بھی ہاتھوں سے گیا ساتھ ہی گھر کی قیمت
ہم نے کچھ ایسے چکائی ہے سفر کی قیمت

میں اندھیرے کو اندھیرا ہی پُکارونگی سدا
جرم ہے یہ تو لگادے میرے سر کی قمیت

کوئی درویش سے اِتنا بھی نہیں پوچھ سکا
بیچ کر آئے ہو دنیا تو کدھر کی قیمت

یہ اُجالے یونہی قسمت میں نہیں آئے ہیں
کچھ چراغوں نے ادا کی ہے سحر کی قیمت

کیسے گریے سے نمی کھینچ کے بھر دی اِس میں
آنکھ سے پوچھ مرے مصرع ء تر کی قیمت

اِتنی قیمت میں نیا بیج نہیں آتا ہے
جتنی لوگوں نے لگائی ہے شجر کی قیمت

اِس قدر خستہ مکانی ہے میری بستی میں
کوئی اوقات دریچے کی نہ در کی قیمت

گھر بھی ہاتھوں سے گیا ساتھ ہی گھر کی قیمت
ہم نے کچھ ایسے چکائی ہے سفر کی قیمت

اپنا تبصرہ بھیجیں