Wehshat Ka Asar Khawab Ka Tabeer Mein Hota

Wehshat Ka Asar Khawab Ka Tabeer Mein Hota

Wehshat Ka Asar Khawab Ka Tabeer Mein Hota
Ek jagne wala meri taqdeer mein hota

Ek alaam khobi se muyassar magar aye kaash
Es gul ka elaqa meri jageer mein hota

Es ahoye ram khordah o khush chisham ki khatir
Ek halqa khushbon meri zanjeer mein hota

Mahtaab mein ek chand si surat nazar aati
Nisbat ka sharf silsila meer mein hota

Marta bhi jo us par tou usay maar ke rakhta
Ghalib ka chalan ishq k tafseer mein hota

Ek qamat zeba ka yeh dawa hai, keh wo hai
Hota tou mere harf gerha geer mein hota

Wehshat ka asar khawab ka tabeer mein hota
Ek jagne wala meri taqdeer mein hota
غزل
وحشت کا اثر خواب کی تعبیر میں ہوتا
اک جاگنے والا مری تقدیر میں ہوتا

اک عالم خوبی سے میسر مگر اے کاش
اس گل کا علاقہ مری جاگیر میں ہوتا

اس آہوئے رم خوردہ وخوش چشم کی خاطر
اک حلقہ خوشبوں مری زنجیر میں ہوتا

مہتاب میں اک چاند سی صورت نظر آتی
نسبت کا شرف سلسلہ میر میں ہوتا

مرتا بھی جو اُس پر تو اُسے مار کے رکھتا
غالب کا چلن عشق کی تفصیر میں ہوتا

اک قامت زیبا کا یہ دعویٰ ہے، کہ وہ ہے
ہوتا تو مرے حرف گرہ گیر میں ہوتا

وحشت کا اثر خواب کی تعبیر میں ہوتا
اک جاگنے والا مری تقدیر میں ہوتا

اپنا تبصرہ بھیجیں