Awaz Ko Sambhaal Koi Haao Ho Na Kar

Ghazal
Awaz Ko Sambhaal Koi Haao Ho Na Kar
Sab log kar rahe hain magar yaar tu na kar

Wo hussan dastaras ka nahi khud ko na thaka
Shoqeen ho kar dekh magar justajoo na kar

Bhai to us ko janta hai nahi na to baaz aa
Main kah raha hun mujh se meri guftagu na kar

Talwar sath rakh ke gale mil raha hun main
Mujh per abhi gumaan-e-mohebo-aduu na kar

Tere liye yeh ruuh ke buzdil hi theek hain
Main parsa nahi hun meri arzoo na kar

Zaryoun ek maqam tha qabal-assalaat-e-ishq
Pani ne mujh se khud yeh kaha ruk wozo na kar

Awaz ko sambhaal koi haao ho na kar
Sab log kar rahe hain magar yaar tu na kar
غزل
آواز کو سنبھال کوئی ہاؤ ہو نہ کر
سب لوگ کر رہے ہیں مگر یار تو نہ کر

وہ حسن دسترس کا نہیں خود کو نہ تھکا
شوقین ہو کر دیکھ مگر جستجو نہ کر

بھائی تو اُس کو جانتا ہے نہیں نا تو باز آ
میں کہہ رہا ہوں مجھ سے میری گفتگو نہ کر

تلوار ساتھ رکھ کے گلے مل رہا ہوں میں
مجھ پر ابھی گمانِ محبُوعدو نہ کر

تیرے لیے یہ روح کے بزدل ہی ٹھیک ہیں
میں پارسہ نہیں ہوں میری آرزو نہ کر

زریونؔ اک مقام تھا قبل الصلوۃ عشق
پانی نے مجھ سے خود یہ کہا رک وضو نہ کر

آواز کو سنبھال کوئی ہاؤ ہو نہ کر
سب لوگ کر رہے ہیں مگر یار تو نہ کر

اپنا تبصرہ بھیجیں