Jo Jahan Uzar Gharay Log Nahi Boltay Hain

Jo Jahan Uzar Gharay Log Nahi Boltay Hain

Jo Jahan Uzar Gharay Log Nahi Boltay Hain
Jaise faremon mein juray log nahi boltay hain

Itni aasani se jhagray nahi suljha karte
Dekh aapis mein laray log nahi boltay hain

Iss qadar zaam nahi acha hai haray hoye shakhs
Yun khasaray mein paray log nahi boltay hain

Ishq ke baray mein sab hasb-e-aqeedat boltay
Hum magar zid peh aray log nahi boltay hain

Aisay dil kasta hai aawazay meri halat par
Jaise rastay mein kharay log nahi boltay hain

Khandanon ki yeh rasmein hain saleebon jaisi
Hum riwajon mein garay log nahi boltay hain

Khali bartan ho to aawaz bohat deta hain
Jitni ranjish ho baray log nahi boltay hain

Jo jahan uzar gharay log nahi boltay hain
Jaise faremon mein juray log nahi boltay hain
غزل
جو ، جہاں عذر گھڑے ، لوگ نہیں بولتے ہیں
جیسے فریموں میں جڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

اِتنی آسانی سے جھگڑے نہیں سلجھا کرتے
دیکھ آپس میں لڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

اِس قدر زعم نہیں اچھا ہے ہارے ہوئے شخص
یوں خسارے میں پڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

عشق کے بارے میں سب حسبِ عقیدت بولے
ہم مگر ضد پہ اڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

ایسے دل کستا ہے آوازے مری حالت پر
جیسے رستے میں کھڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

خاندانوں کی یہ رسمیں ہیں صلیبوں جیسی
ہم رواجوں میں گڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

خالی برتن ہو تو آواز بہت دیتا ہے
جتنی رنجش ہو بڑے لوگ نہیں بولتے ہیں

جو ، جہاں عذر گھڑے ، لوگ نہیں بولتے ہیں
جیسے فریموں میں جڑے لوگ نہیں بولتے ہیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں