Gaye Mausam Mein Jo Khilte Thay Gulabon

Gaye Mausam Mein Jo Khilte Thay Gulabon

Gaye Mausam Mein Jo Khilte Thay Gulabon Ki Tarah
Dil peh utren gay wohi khwab azaabun ki tarah

Rakh ke dhair peh ab raat basar karni hai
Jal chukay hain mere khemay mere khwabon ki tarah

Saat deed keh aarz hain gulabi ab tak
Awaleen lamhon ke gulnnar hijabon ki tarah

Woh samandar hai to phir rooh ko shadaab kare
Tishnagi kyun mujhe deta hai sarabun ki tarah

Ghair mumkin hai tere ghar ke gulabun ka shumar
Mere raste hoye zakhmon ke hisaabon ki tarah

Yaad to hoon gi woh baatein tujhe ab bhi lekin
Shelf mein rakhi hoi band kitabon ki tarah

Kon jane keh naye saal mein to kis ko parhe
Tera mayyar badalta hai nisaabon ki tarah

Shokh ho jati hai ab bhi teri aankhon ki chamak
Gahe gahe tere dilchasp jawabon ki tarah

Hijar ki shab meri tanhai peh dastak de gi
Teri khushboo mere khoye hoye khwabon ki tarah

Gaye mausam mein jo khilte thay gulabon ki tarah
Dil peh utren gay wohi khwab azaabun ki tarah
غزل
گئے موسم میں جو کھلتے تھے گلابوں کی طرح
دل پہ اُتریں گے وہی خواب عذابوں کی طرح

راکھ کے ڈھیر پہ اب رات بسر کرنی ہے
جل چکے ہیں مرے خیمے مرے خوابوں کی طرح

ساعت دید کہ عارض ہیں گلابی اب تک
اولیں لمحوں کے گلنار حجابوں کی طرح

وہ سمندر ہے تو پھر روح کو شاداب کرے
تشنگی کیوں مجھے دیتا ہے سرابوں کی طرح

غیر ممکن ہے ترے گھر کے گلابوں کا شمار
میرے رستے ہوئے زخموں کے حسابوں کی طرح

یاد تو ہوں گی وہ باتیں تجھے اب بھی لیکن
شیلف میں رکھی ہوئی بند کتابوں کی طرح

کون جانے کہ نئے سال میں تو کس کو پڑھے
تیرا معیار بدلتا ہے نصابوں کی طرح

شوخ ہو جاتی ہے اب بھی تری آنکھوں کی چمک
گاہے گاہے ترے دلچسپ جوابوں کی طرح

ہجر کی شب مری تنہائی پہ دستک دے گی
تیری خوشبو مرے کھوئے ہوئے خوابوں کی طرح

گئے موسم میں جو کھلتے تھے گلابوں کی طرح
دل پہ اُتریں گے وہی خواب عذابوں کی طرح

اپنا تبصرہ بھیجیں