Gay Baras Ki Eid Ka Din Kya Acha Tha

ںظم
گئے برس کی عید کا دن کیا اچھا تھا
چاند کو دیکھ کے اس کا چہرہ دیکھا تھا

فضا میں کیٹسؔ کے لہجے کی نرماہٹ تھی
موسم اپنے رنگ میں فیضؔ کا مصرعہ تھا

دعا کے بے آواز الوہی لمحوں میں
وہ لمحہ بھی کتنا دل کش لمحہ تھا

ہاتھ اٹھا کر جب آنکھوں ہی آنکھوں میں
اس نے مجھ کو اپنے رب سے مانگا تھا

پھر میرے چہرے کو ہاتھوں میں لے کر
کتنے پیار سے میرا ماتھا چوما تھا!

ہوا! کچھ آج کی شب کا بھی احوال سنا
کیا وہ اپنی چھت پر آج اکیلا تھا؟

یا کوئی میرے جیسی ساتھ تھی اور اس نے
چاند کو دیکھ کے اس کا چہرہ دیکھا تھا؟
 
Nazam
Gay Baras Ki Eid Ka Din Kya Acha Tha
Chand ko dekh ke us ka chehra dekha tha

Faza mein ‘keats’ ke lahje ki narmahat thi
Mausam apne rang mein ‘faiz’ ka misra tha

Dua ke be-awaz uluhi lamhon mein
Wo lamha bhi kitna dilkash lamha tha

Hath uTha kar jab aaankhon hi aaankhon mein
Us ne mujh ko apne rab se manga tha

Phir mere chehre ko hathon mein le kar
Kitne pyar se mera matha chuma tha

Hawa! kuchh aaj ki shab ka bhi ahwal suna
Kya wo apni chhat par aaj akela tha

Ya koi mere jaisi sath thi aur us ne
Chand ko dekh ke us ka chehra dekha tha

اپنا تبصرہ بھیجیں