Sar Hi Ab Phodiye Nadamat Mein

سر ہی اب پھوڑیے ندامت میں
نیند آنے لگی ہے فرقت میں
ہیں دلیلیں ترے خلاف مگر
سوچتا ہوں تری حمایت میں
روح نے عشق کا فریب دیا
جسم کو جسم کی عداوت میں
اب فقط عادتوں کی ورزش ہے
روح شامل نہیں شکایت میں
عشق کو درمیاں نہ لاؤ کہ میں
چیختا ہوں بدن کی عسرت میں
یہ کچھ آسان تو نہیں ہے کہ ہم
روٹھتے اب بھی ہیں مروت میں
وہ جو تعمیر ہونے والی تھی
لگ گئی آگ اس عمارت میں
زندگی کس طرح بسر ہوگی
دل نہیں لگ رہا محبت میں
حاصل کن ہے یہ جہان خراب
یہی ممکن تھا اتنی عجلت میں
پھر بنایا خدا نے آدم کو
اپنی صورت پہ ایسی صورت میں
اور پھر آدمی نے غور کیا
چھپکلی کی لطیف صنعت میں
اے خدا جو کہیں نہیں موجود
کیا لکھا ہے ہماری قسمت میں
sar hi ab phodiye nadamat mein
nind aane lagi hai furqat mein
 
hain dalilen tere khilaf magar
sochta hun teri himayat mein
 
ruh ne ishq ka fareb diya
jism ko jism ki adawat mein
 
ab faqat aadaton ki warzish hai
ruh shamil nahin shikayat mein
 
ishq ko darmiyan na lao ki main
chikhta hun badan ki usrat mein
 
ye kuchh aasan to nahin hai ki hum
ruthte ab bhi hain murawwat mein
 
wo jo tamir hone wali thi
lag gai aag us imarat mein
 
zindagi kis tarah basar hogi
dil nahin lag raha mohabbat mein
 
hasil-e-kun hai ye jahan-e-kharab
yahi mumkin tha itni ujlat mein
 
phir banaya khuda ne aadam ko
apni surat pe aisi surat mein
 
aur phir aadmi ne ghaur kiya
chhipkili ki latif sanat mein
 
ai khuda jo kahin nahin maujud
kya likha hai hamari qismat mein

اپنا تبصرہ بھیجیں